انتساب


مرحوم والدہ کے نام

جب میرے جسم پر معذوری کا سیاہ پتھر رکھ دیا گیا
اور روح کی طنابیں توڑ دی گئیں تو موسم نا مہربان ہوگئے
صرف ایک ہی چہرہ زندگی تھا
جس نے میری خوشیوں کے لئے اپنے خالی دامن میں
پھولوں کی جگہ خواب بھر لئے
اپنی راتوں کو بے آرام کیا
میرے بنجر ہوتے وجود کو آب حیات سے سیراب کیا
اب جب کہ رت بدل چکی ہے
وقت کی سیاہ آندھیوں نے اس روشن چہرے کو بجھا دیا ہے
اس کا سایہ دار وجود مٹی کا رزق بن چکا ہے
مگر زندگی اب بے معنی نہیں کہ آج بھی اس کا نام
میرے لئے محبتوں کا اسم اعظم ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s