بے دروازہ گلی

بے دروازہ گلی

 

یہ تنہائی

آگ کے درخت جیسی ہے

اور ان ویران گلیوں میں کوئی دروازہ نہیں کھلتا

لوگ دعا مانگنا بھہول گئے ہیں

ہر چہرہ پھتر ہے

صرف ایک ہی آنکھ روتی ہے

اور ایک ہی دریا بہتا ہے

کوئی اڑتا پرندہ نہیں

صرف ہاتھ اٹھے ہوئے ہیں

موسم کی جلتی ہوئی شام کی طرف

یہ تنہائی

ایک ایسے لمحے کی تصویر ہے

جو کسی مطلوم کی آنکھ میں

ٹھہر گیا ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s