کھلونوں کے پھول

کھلونوں کے پھول

 

وقت کے آئینہ پر

میں اپنا چہرہ دیکھنا چاھتا ہوں

مگر بوڑھے خوابوں کی گرفت میں

سور ج ڈوب گیا ہے

آسمان تک دھول اڑ رہی ہے

تازگی کو ترسا ہوا موسم ہے

دروازہ بےصدا ہے

گرد باد دور تک پھیلا ہے

اب ہم اپنے خوابوں کو

پورا نہیں کرسکتے

مٹی کے کھلونوں پر

رنگ برنگے پھول بناتے ہیں

اور اپنے دکھ خالی لباسوں کے ساتھ

صندوقوں میں بند کردیتے ہیں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s