وہ مجھے دیکھتی ہے

میری بانہوں میں اس کا چہرہ پگھل جاتا ہے

اور وہ یوں مجھے دیکھتی ہے

کہ کہیں اس کے خواب ٹوٹ نہ جائیں

اس کے ہاتھ لہولہاں نہ ہو جائیں

اس کی پیاس ادھوری نہ رہ جائے

مگر میں کناروں تک پھیلا ہوا آسماں ہوں

جو اس کی پیشانی کو چوم کر

سمندر بن جاتا ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s