سیا ہ موسموں کا دروازہ

سیاہ موسموں سے زندگی کو

چرانا پڑتا ہے

مگر کتنے برس اور ہم

یہ طوق گلے میں ڈالیں گے

کو ئی آھٹ بلند نہیں ہوتی

کوئی جھونکا خوشبو نہیں بنتا

جسم کو کاٹتا ایک دریا بہتا ہے

یہ وہ دعا نہیں

جو پوری ہوئی

سلگتے جسموں سے جلتے جہنم تک

زندگی سیاہ موسموں کا دروازہ ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s