ابابیلیں اڑ رہی ہیں

صرف تمہارا چہرہ ہے

جو میرے جسم سے جوڑ دیا گیا ہے

مگر میرے ہاتھ خالی ہیں

زندگی کے ویران راستوں پر

ابابیلیں اڑ رہی ہیں

ہر پتھر تمہارا چہرہ ہے

جو چلتے ہوئے سورج کی طرح

پگھل رہا ہے

آوازوں کے شور کو

خاموشی کے کوزے میں بند کر دیا گیا ہے

جہاں تم ایک چہرے سے

کئی چہروں میں بٹتی جارہی ہو

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s