ہونٹوں کو چوم کر

یہ لمحہ جو ہماری دھڑکن سے

دور تھا

برف کی دیوار کی طرح تھا

آسمان کاغذ کا بن گیا تھا

اور سورج

ایک جلتی ہوئی دعا

ہم کٹ رہے تھے

اور جسم کے ہر حصے کو جوڑ رہے تھے

گلاب کو شاخ پر رکھ رہے تھے

اور ہونٹوں کو چوم کر

محبت کا وعدہ کر رہے تھے

مگر وقت کا وہ لمحہ

ہماری دھڑکنوں سے دور تھا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s