رات کا آخری پہر

ایک ساز ہے

مگر آواز نہیں

ایک چہرہ ہے

مگر عبارت نہیں

ایک اترتی ہوئی رات ہے

مگر کوئی دیا نہیں

صرف آنکھیں ہیں

جو ایک بے وفا کے پاس

گروی ہیں

اور دو دلوں کے بیچ

ایک بند دروازہ ہے

جسے کوئی روز

رات کے آخری پہر کھولتا ہے

اور سناٹوں کو آواز سے

جوڑ دیتا ہے

 

 

 

 

 

    

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s