یہ جنگل ہے

یہ جنگل ہے

اور ڈور تے ہوئے

میرے پاؤں زخمی ہوچکے ہیں

میں سمتوں کا گمان کھو چکا ہوں

اور کسی آہٹ کی طرف ڈورتا ہوں

میں لہولہان ہوں

اور کسی بھی لمحے آزادی کی خواہش سے ٹوٹ سکتاہوں

یہ جنگل جو پہلے پرندوں کی آوازوں سے بھرا تھا

اب خاموشی کی سزا کاٹ رہا ہے

کوئی سرسراتی ہوا نہیں گزر رہی ہے

جو کسی احساس کو جنم دے

میری آنکھیں پتھرا گئی ہیں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s